اوگرا نے سوئی کمپنیوں کے لیے گیس کی قیمت میں اضافے کی منظوری دے دی

اوگرا نے سوئی کمپنیوں کے لیے گیس کی قیمت میں اضافے کی منظوری دے دی

ڈان اخبار کی رپورٹ کے مطابق ریگولیٹری باڈی نے اوگرا آرڈیننس 2002 کے سیکشن 8 (1) کے تحت 17 اگست 2021 کے اپنے فیصلوں میں مالی سال 2022 کے لیے ایس این جی پی ایل اور ایس ایس جی سی ایل کی متوقع آمدنی کی ضرورت کا تعین کیا ہے۔

اوگرا آرڈیننس کے سیکشن 8 (3) کے تحت ضرورت کے مطابق دونوں فیصلے وفاقی حکومت کو کیٹیگری کے حساب سے قدرتی گیس کی فروخت کی قیمت کی تجویز حاصل کرنے کے لیے بھیجے گئے ہیں۔

مالی سال 2021-22 کے لیے اوگرا کی منظور کردہ ایس این جی پی ایل کے دعوے کے مطابق آمدنی کی ضرورت کے تعین کا خلاصہ یہ ہے۔

ایس این جی پی ایل کے گزشتہ سالوں کے 2 کھرب 54 ارب 10 کروڑ روپے کے شارٹ فال یعنی 669.75 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو کے مالی اثرات کو مناسب پالیسی فیصلے کے لیے وفاقی حکومت کے پاس بھیجا گیا ہے۔

ایس ایس جی سی ایل کی مانگ اور مالی سال 2022 کی اجازت کے درمیان موازنہ یہ ہے۔

اوگرا نے گیس کمپنیوں کی مالی سال 2022 کے لیے گیس کی قیمتوں میں اضافے کی مانگ کو کم کر دیا ہے۔

اس کے علاوہ گیس کی یوٹیلیٹی کے نظام میں گیس کنکشنز کی زیادہ التوا کا نوٹس لیتے ہوئے کئی نامکمل ترقیاتی منصوبوں کے علاوہ اتھارٹی نے سوئی کمپنیوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ تمام جاری یا نامکمل منصوبوں کی تنصیب کے لیے فوری طور پر آگے بڑھیں، جیسا کہ پہلے اجازت دی گئی تھی۔

ایس ایس جی سی ایل کے حوالے سے کمپنی کو خاص طور پر ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اپنے فرنچائز علاقے میں واقع گیس چوروں کی بڑی تعداد کے خلاف فوری طور پر مؤثر اور سختی سے کارروائی کرے تاکہ اس کی بڑھتی ہوئی یو ایف جی کو نیچے لایا جا سکے۔

مذکورہ بالا عزم کے ذریعے وفاقی حکومت سے درخواست کی گئی ہے کہ وہ کیٹیگری کے حساب سے فروخت کی قیمتوں کے بارے میں تجویز دے۔

وفاقی حکومت کی تجویز ہر کسی بھی قسم کی نظرثانی اوگرا کی جانب سے نوٹیفائی کی جائے گی۔

اُس وقت تک کیٹیگری کے حساب سے قدرتی گیس کی موجودہ قیمتیں ہی برقرار رہیں گی۔

ڈان نیوز

Share

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: